Understanding and Addressing Common Health Concerns

Introduction:

بیوی ایک نعمت ہے کیونکہ ذندگی میں محبت بہت ضروری ہے ساتھ اگر مخلص بیوی ہو تو زندگی اچھی ہو جاتی ہے۔ کہتے ہیں زندگی امتحان ہے اور اس امتحان کا سب سے مشکل اور لازمی سوال بیوی ہے۔ بیویاں دو قسم کی ہوتی ہیں۔ایک وہ جو بہت خوبصورت، نرم مزاج، خوش گفتار، معاملہ فہم، صبر و شکراور پیار کرنیوالیاں اور دوسری حقیقی ۔ میاں اور بیوی پچیس سال تک ہنسی خوشی بےغمخوشحال زندگی گذارتے ہیں پھر ایک دن ان کی شادی ہو جاتی ہے ۔ خوش قسمت ہے

وہ شخص جو محنت سے کروڑ پتی ہو اور ذہین ہے وہ خاتون جو ایسا شوہرڈھونڈ لے۔ ذہین بیوی بڑی آسانی سے شوہر کو لکھ پتی بنا دیتی ہے ۔ بشرطیکہ وہ کروڑ پتی ہو. کسی دانا کا قول ہے اور مجھے یہ بتاتے ہوئے ہر گز کوئی عار نہیں کہ وہ دانا میں خود ہی ہوں۔ کہ ننانوے فیصد شوہر بیویوں سے ڈرتے ہیں اور باقی ایک فیصد جھوٹ بولتے ہیں۔ ایک سروے کے مطابق بیویاں شوہروں سے زیادہ عرصہ تک زندہ رہتی ہیں ۔ یقیناً اس کی وجہ یہی رہی ہوگی کہ ا ن کی کوئی بیوی نہیں ہوتی اور موٹی بیویوں کی عمریں خاص طور پر اپنے شوہروں سے لمبی ہوتی ہیں، اور وہ بھی اگر وہ ان کو موٹی کہہ بیٹھیں ۔ آپ نے کبھی سوچا کہ بچوں کی بولی ہمیشہ مادری زبان کیوں کہلاتی ہے حالانکہ ولدیت باپ کے نام سے چلرہی ہوتی ہے ۔ اس کی وجہ بڑی سادہ ہے بھئی جو گھر میں بولے گا اس کی زبان ہیبچے سیکھیں گے نا۔ قانون کے ہاتھ بہت لمبے ہوتے اور بیوی کی زبان۔ سنتے ہیں کہ ایک آدمی پر بیوی سے ہفتہ بھر بات نہ کرنے کا الزام تھا ۔

جج صاحب نے پوچھا کہ کیا یہ درست ہے کہ آپ نے ایک ماہ سے اپنی بیوی سے بات نہیں کی ۔ وہ دراصل میں قطع کلامی نہیں کرنا چاہتا تھا ۔ ملزم شوہر نے جواب دیا ۔ کہتے ہیں میاں اور بیوی گاڑی کے دو پہیے ہوتے ہیں ۔ ہم نے بہت سوچا دو پہیوں والی گاڑی تو صرف گدھا گاڑی ہی ہوتی ہے ۔ پر پھر بھی محاورہ میں کوئی گڑ بڑ ضرور ہے ۔ بھلا کوئی شخص ایک وقت میں گدھا اور پہیہ کیسے ہو سکتا ہے ۔۔ میری بیوی کی یاداشت بہت کمال کی ہے ۔وہ مجھے سو چیزیں لانے کو کہے تو میں بعض اوقات صرف ننانوے لے آتا ہوں اور ایک بھول جاتا ہوں ۔ مگر وہ نہیں بھولتی۔نہ صرف یہ کہ وہ فوراً جان لیتی ہے کہ میں کونسی چیز نہیں لایا ۔بلکہ اس کو تو یہ تک یاد ہوتا ہے کہ وہی چیز تو سب سے اہم اور ناگزیر تھی باقی ننانوے تو احتیاطاً ساتھ منگائی گئی تھیں ۔ اسی طرح اس کو یہ بھی یاد رہتا ہے کہ انیس سال سات ماہ اور بیس دن پہلے میں نے اس کی خالہ رقیہ کے گھر کس وجہ سے نہیں گیا تھا ۔

اور وہ اسی وجہ سے بیسیوں بار میری خالاؤں کے گھر نہیں جاچکی۔ ہاں مگر صرف اس کو یہ بات کبھی کبھی بھول جاتی ہے کہ ابھی صبح اس کو میں نے کچھ پیسے دیے تھے۔ میری بیگم کھانا ہمیشہ مجھ سے پوچھ کر پکاتی ہے۔وہ قریب دس منٹ میری رائے لیتی رہتی ہے کہ آج میرا کیا کیا کھانے کو من ہے۔ پھر وہ بڑے اہتمام کے ساتھ وہ چیز پکاتی ہے جو میں نے نہیں کہی ہوتی۔ اس کو خود مغز کھانا پسند ہے ۔ میری بیگم کے خیال میں دنیا کا سب سے نکما شوہر میں ہوں اوردنیا کا سب سے اچھا شوہر اس کا بھائی ہے ۔حالانکہ اس کے بھائی کی بیوی کا بھی یہی خیالات ہیں اپنے شوہر اور اپنے بھائی کے متعلق وعلی ھذالقیاس ۔یاد رہے کہ صرف یہ واحد بات ہے جس پر میری بیگم اور اس کی ساس کا اتفاق ہے کہ دونوں کے شوہر نکھٹو اور غیر چالاک ہیں۔ بری بیویاں ہر تیسرے دن اپنے شوہروں سے ناراض ہوتی ہیں۔ جبکہ اچھی بیویاں ہفتے میں صرف دو بار۔ بیوی کو منانے کا سب سے آسان طریقہ ہے کہ

اس کو تین بار خریداری کے لئے لے کر جایا جائے۔ پہلی بار پسند کروانے کے لئے، دوسری بار خریدنے اور تیسری بار تبدیل کروانے کے لئے ۔ بیگم صاحبہ ہر خاندانی اور غیر خاندانی تقریب پر نئے کپڑے اور جوتے خریدتی ہیں۔ کہ پہلے والے سب نے دیکھ رکھے ہوتے ہیں ۔ہم بارہا عرض کر چکے ہیں کہ سب نے تو آپ کو اور ہمیں بھی دیکھ رکھا ہے ۔ ان کو ہماریاس بات سے آدھا اتفاق ہے۔ اس لئے وہ ہمیں کہتی ہیں کہ کیا کرنے ہیں آپ نے نئے کپڑے ابھی پچھلی عید پر تو سلوائے تھے۔ عید بقر عید پر گھر میں مہمان آتے ہیں جو سب کے لیے عیدیاں دیکرجاتے ہیں۔ بیگم صاحبہ پھر ہم سے رقم کا تقاضہ کرتی ہیں جوابی عیدیوں کے لیے۔ اگر ہم کہیں کہ بھئی وہ پیسے کہاں گئے جو وہ لوگ دے کر گئے تھے تو ان کا اعلان ہوتا ہے کہ وہ تو میں نے”سنبھال” لیے ہیں۔ اور ہمارا تجربہ ہے کہ بیگم اور سرکار نے ایک بار پیسے لے لیے تو ان سے واپس پھر کوئی مائی کا لعل نہیں لے سکتا ۔

عورت کو مرد کی بائیں پسلی سے پیدا کیا گیا ہے ۔اور یہی وہ مقام ہے جہاں پر مرد کا دل ہوتا ہے شاید اسی لئے اس میں عورتوں کے لئے جگہ ہی جگہ ہوتی ہے ۔ اور اسی بنا پر مرد بااہتمام وبصد شوق اپنی بیوی کو اپنے دل میں جگہ دیتا ہے ۔ مگر بیوی بہت جلد وہاں سے اترجاتی ہے اپنی زبان کی سیڑھی کے ذریعہ سے ۔ استاد صاحب کہا کرتے تھے جو عورت دو بچوں کی ماں بن جائے وہ پھر شوہر کو تگنی کا ناچ نچا دیتی ہے ۔ہم نے پوچھا استاد جی اس کا کوئی حل بھی تو ہوگا ۔فرمانے لگے بیٹا بس حل یہی ہے کہ تگنی کا ناچ پہلے سے سیکھ رکھو عین وقت پر دقت نہ ہو گی۔ استاد جی بہت یاد آتے ہیں ۔کبھی ملے تو پوچھوں گا جس کے چار ہوں اس کے لئے کیا حکم ہے۔ کیا اچھا ہو کہ ہمار اعمال ایسے کہ ہم ان لوگوں میں سے ہو جائیں جن کے لیے اللہ فرماتے ہیں وَالَّذِينَ يَقُولُونَ رَبَّنَا هَبْ لَنَا مِنْ أَزْوَاجِنَا وَذُرِّيَّاتِنَا قُرَّةَ أَعْيُنٍ وَاجْعَلْنَا لِلْمُتَّقِينَ إِمَامًا۔

In the intricate tapestry of human existence, health is a thread that weaves through every aspect of life. While the human body is resilient and adaptable, it is not immune to various health concerns that can impact well-being. From minor ailments to chronic conditions, understanding and addressing common health concerns is essential for maintaining a vibrant and fulfilling life. In this article, we explore some of the most prevalent health issues faced by individuals worldwide and strategies for managing them effectively.

1. Respiratory Infections:
Respiratory infections, such as the common cold, flu, and pneumonia, are among the most widespread health concerns globally. These infections affect the upper respiratory tract, leading to symptoms like coughing, sneezing, congestion, and fever. Prevention measures include practicing good hand hygiene, avoiding close contact with sick individuals, and getting vaccinated against influenza. Treatment often involves rest, hydration, over-the-counter medications, and in severe cases, prescribed antiviral or antibiotic medications.

2. Cardiovascular Disease:
Cardiovascular disease encompasses a range of conditions affecting the heart and blood vessels, including coronary artery disease, hypertension, and stroke. Risk factors for cardiovascular disease include smoking, unhealthy diet, physical inactivity, obesity, and stress. Lifestyle modifications such as regular exercise, a balanced diet, smoking cessation, and stress management can help prevent and manage cardiovascular disease. Additionally, medications to control blood pressure, cholesterol levels, and blood clotting may be prescribed by healthcare providers.

3. Mental Health Disorders:
Mental health disorders, including depression, anxiety, and bipolar disorder, affect millions of individuals worldwide and can significantly impact quality of life. Factors such as genetics, trauma, stress, and brain chemistry contribute to the development of mental health disorders. Treatment options may include psychotherapy, medication, lifestyle changes, and support groups. Creating a supportive environment, reducing stigma, and promoting mental health awareness are crucial in addressing these common health concerns.

4. Musculoskeletal Conditions:
Musculoskeletal conditions, such as arthritis, back pain, and sports injuries, affect the bones, joints, muscles, and connective tissues, causing pain, stiffness, and impaired mobility. Risk factors include aging, obesity, poor posture, and repetitive movements. Treatment may involve physical therapy, medications, rest, exercise, and in severe cases, surgery. Prevention strategies include maintaining a healthy weight, practicing good posture, exercising regularly, and using proper ergonomic techniques.

5. Diabetes:
Diabetes is a chronic metabolic disorder characterized by high blood sugar levels due to inadequate insulin production or insulin resistance. Type 2 diabetes, which accounts for the majority of cases, is closely linked to lifestyle factors such as poor diet, physical inactivity, and obesity. Management of diabetes involves blood sugar monitoring, medication, insulin therapy, healthy eating, regular exercise, and weight management. Education about diabetes prevention and management is essential for individuals at risk and those living with the condition.

Conclusion:
Common health concerns affect individuals of all ages, backgrounds, and lifestyles, underscoring the importance of proactive healthcare and preventive measures. By understanding the risk factors, symptoms, and treatment options for common health issues, individuals can take charge of their well-being and make informed decisions about their health. Additionally, fostering a culture of health promotion, disease prevention, and access to healthcare services is vital in addressing the collective health needs of communities worldwide.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *